چاکلیٹی ہیرووحید مراد کی سالگرہ؛ گوگل ڈوڈل کا خراج تحسین


لاہور: اپنے وقت کے نامورپاکستان کے چاکلیٹی ہیروکے نام سے مشہوراداکاروحید مراد کی سالگرہ پرگوگل ڈوڈل بھی ان کے رنگ میں رنگ گیا۔

گوگل ڈوڈل بھی آج پاکستان کے چاکلیٹی ہیرو وحید مراد کی 81 ویں سالگرہ کے دن ان کے رنگ میں رنگ گیا۔ گوگل ڈوڈل میں آج اداکارکی بہترین عکاسی کی گئی ہے جہاں فنکار کی گراں قدر خدمات کا اعتراف کیا گیا ہے۔

2 اکتوبر 1938 کو پیدا ہونے والے پاکستان کے چاکلیٹی ہیرو وحید مراد نے ابتدائی تعلیم میری کلاسواسکول سے حاصل کی بعد ازاں انہوں نے انگلش ادب میں ایم اے کی ڈگری حاصل کی۔
وحید مراد نے اپنے فلمی کیرئیر کا آغاز 1959 میں فلم ’’ساتھی‘‘ سے کیا۔ 1962 میں انہیں ایس ایم یوسف کی فلم ’’اولاد‘‘ میں ایک اہم رول کے لیے کاسٹ کیا گیا اس فلم نے گولڈن جوبلی کا اعزاز حاصل کیا۔ وحید مراد کی شہرت میں فلم ’’ہیرا اور پتھر‘‘ سے مزید اضافہ ہوا۔ انہیں پاکستان کی پہلی پلاٹینیم جوبلی فلم ’’ارمان‘‘ کے لیے بیک وقت فلم ساز، مصنف اور ہیرو ہونے کا اعزاز حاصل ہے۔

چاکلیٹی ہیرو نے’’ اولاد‘‘ سے لے کر’’ زلزلہ‘‘ تک کل 125 فلموں میں کام کیا اور ان کا ہر کردار جانداررہا۔ ’’ اکیلے نہ جانا‘‘ سے لے کر دیگر گانوں نےانہیں لازوال شہرت دی۔ اُن کی پہلی فلم ’’اولاد‘‘ اورآخری ریلیز شدہ فلم ’’زلزلہ‘‘ تھی۔

انہوں نے ایک پشتو فلم ’’پختون پہ ولایت کے‘‘ میں بھی کام کیا، یہ اداکار آصف خان کی ذاتی فلم ’’کالا دھندا گورے لوگ ‘‘کا پشتو ورژن تھا۔ وحید مراد بیک وقت فلم ایکٹر، فلم پروڈیوسراوراسکرپٹ رائٹر بھی تھے۔ وحید مراد کی بہترین فلموں میں ’’ دل میرا دھڑکن تیری‘ ،’ہیرا اور پتھر‘ ،’ارمان‘ ،’عندلیب‘ ،’مستانہ ماہی‘، ’انسانیت‘ ،’دیور بھابھی‘وغیرہ شامل ہیں۔

وحید مراد نے اپنی 23 سالہ فلمی زندگی میں اعلیٰ کارکردگی کی بناء پرمجموعی طور پر 32 ایوارڈ حاصل کیے۔ وحید مراد نے اپنی زندگی کے آخری لمحات اپنی منہ بولی بہن ممتازایوب کے گھر کراچی میں گزارے اوریہیں ان کا 23 نومبر 1983 کوانتقال ہوااور وہ خالق حقیقی سے جا ملے۔

اپنا تبصرہ بھیجیں