اربوں روپے کا اثاثہ تباہی کے دہانے پر. قیمتی انسانی جانوں کیلئے موت کا کنواں 125

ڈیرہ ٹانک روڈ،اربوں روپے کا اثاثہ تباہی کے دہانے پر

ٹانک: اربوں روپے کا قومی اثاثہ نہ صرف تباہی کے دہانے پر پہنچ گیا ہے بلکہ قیمتی انسانی جانوں کیلئے موت کا کنواں بنتا چلا جارہا ہے.

تفصیلات کے مطابق حال ہی میں تعمیر کئے جانے والے ٹانک ڈیرہ اسماعیل خان روڈ جہاں اچھی تعمیر میں اپنی مثال آپ ہیں وہیں پر اس کی دیکھ بھال نہ ہونے کے باعث اربوں روپے کا یہ بیش قیمت قومی اثاثہ اپنی مدت پوری کرنے سے قبل ناکارہ ہونے کے قریب پہنچ چکا ہے

ٹانک سے ڈیرہ اسماعیل خان جاتے ہوئے روڈ جہاں بظاہر تو انتہائی آرام دہ ہے لیکن صورتحال اس کے برعکس ہے سڑک کے دونوں اطراف میں انتہائی خطرناک بڑے بڑے کھڈے کسی بھی وقت سڑک کا بٹھہ بٹھانے کے ساتھ ساتھ قیمتی انسانی جانوں کو لقمہ اجل بنا سکتا ہے

سڑک کنارے مذکورہ کھڈے نہ صرف کھڈا ہونے تک محدود ہیں بلکہ اب تو بارشوں سے سڑک کے نیچے آر پار سرنگوں کی شکل اختیار کرتے چلے جارہے ہیں جو نہ صرف سڑک کو ختم کرنے کیلئے کافی ہیں بلکہ کسی بھی بڑی تخریب کاری کا سبب بھی بن سکتے ہیں لیکن سوال یہ ہے کہ بیش قیمت قومی اثاثہ کی تعمیر تو کردی گئی لیکن اس کی دیکھ بھال کیوں نہیں کی جارہی کیوں ہمارے متعلقہ ذمہ دار محکمے اس ضمن میں خاموش تماشائی ہیں کیا مذکورہ سڑک کی تباہی و بربادی کا انتظار کیا جارہا ہے اگر سڑک اپنی مدت پوری کرنے سے قبل خراب ہوگئی تو اس کا ذمہ دار کون ہوگا کیا انسانی جانوں کی قربانی کا انتظار کیا جارہا ہے میری متعلقہ اداروں کے سربراہان سے گزارش ہے کہ خدارا آپ لوگ بھی تو اسی سڑک پر سفر کرتے ہونگے اس کے حال پر رحم کریں اس کی دیکھ بھال میں کوتاہی برتنے سے قبل ایسا نہ ہو کہ ان گھڈوں کا آپ یا آپ کے پیارے لقمہ نہ بن جائیں

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

جواب دیجئے