ڈیڈ‌لاک برقرار،چوہدری پرویز سے مولانا کی ملاقات بے نتیجہ رہی 42

ڈیڈ‌لاک برقرار،مولانا سے چوہدری پرویزالہٰی کی ملاقات بے نتیجہ رہی

اسلام آباد :حکومت کی مذاکراتی کمیٹی کے رکن اور پنجاب اسمبلی کے سپیکر چوہدری پرویز الہی نے جمعرات کو جمعیت علمائے اسلام کے سربراہ مولانا فضل الرحمان سے ملاقات کی ہے اور ان سے آزادی مارچ ختم کرنے سے متعلق بات چیت کی ہے۔

اس ملاقات میں مولانا فضل الرحمان نے اپنے موقف کو دہرایا کہ رہبر کمیٹی جو بھی فیصلہ کرے گی اس پر عمل کیا جائے گا تاہم ابھی تک رہبر کمیٹی اپنے موقف پر قائم ہے جس میں وزیر اعظم عمران خان کا استعفی بھی شامل ہے۔

ملاقات کے بعد میڈیا کے نمائندوں سے گفتگو کرتے ہوئے چوہدری پرویز الہی کا کہنا تھا کہ چیزیں بہتری کی طرف جا رہی ہیں، معاملے کے حل کے لیے بہت ساری تجاویز ہیں اور قوم کو ایک ہی دفعہ خوشخبری سنائیں گے۔

اُنھوں نے کہا کہ انتخابات میں ہونے والی مبینہ دھاندلی کی تحقیقات کے لیے جوڈیشل کمیشن کے قیام سمیت مولانا فضل الرحمان جس معاملے پر راضی ہوں گے اسی پر بات کریں گے.

جبکہ دوسری جانب اپوزیشن کی رہبر کمیٹی کے کنوینر اور جمعیت علمائے اسلام ف کے رہنما اکرم درانی نے رہبر کمیٹی کے اجلاس کے بعد پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے کہا ہے کہ آئندہ دو روز میں آزادی مارچ ایک نیا رخ اختیار کرے گا۔

ان کا کہنا تھا کہ رہبر کمیٹی نے نہ صرف آزادی مارچ کو جاری رکھنے کا فیصلہ کیا ہے بلکہ حکومت پر مزید دباؤ بڑھانے پر بھی اتفاق ہوا ہے۔

اس سوال پر کہ حکومت پر دباؤ کیسے بڑھایا جائے گا پیپلز پارٹی کے رہنما فرحت اللہ بابر نے کہا کہ اس حوالے سے مختلف تجاویز زیرِ غور ہیں جن کے بارے میں میڈیا کو آگاہ نہیں کیا جا سکتا کیونکہ اس صورت میں حکومت اپنی حکمت عملی بنا سکتی ہے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں