پاکیزگی اور صفائی ، مسواک کے فوائد 6

پاکیزگی اور صفائی ، مسواک کے فوائد

میری قسمت سے الہی پائیں یہ رنگ قبول
پھول کچھ میں نے چنے ہیں ان کے دامن کے لیے
فقہیہ ابو اللیث ثمر قند ی اپنی سند کے ساتھ نقل کرتے ہیں کہ حضور پاک ۖ نے ارشاد فرمایا کے مسواک ضرور استعمال کیا کرو اس میں دس فائدے ہیں۔ مسواک منہ کو صاف کرتی ہے۔ اللہ تعالیٰ کی رضا کا سبب ہے ۔ ملائکہ کی خوشی کا زریعہ ہے ۔ آنکھوں کو جلا بخش ہے۔ دانتوں کو سفید کرتی ہے۔ مسوڑھوں کو مظبوط کرتی ہے۔ اور اسکی بیماری کا خاتمہ کرتی ہے۔ کھانے کو ہضم کرنے میں مدد دیتی ہے بلغم کو ختم کرتی ہے۔ نمازوں کا اجر اس بڑھ جاتا ہے ۔ منہ میں خوشبوں پیدا کرتی ہے ۔ جو کہ قرآن پاک کے نکلنے کا راستہ ہے ۔ حضرت حسان بن عطیہ حضور پاک ۖ کا یہ ارشاد نقل کرتے ہیں کہ وضو کاایک حصہ ہے ۔ اور مسواک وضو کا ایک حصہ ہے ۔ اگر میں اپنی ا مت کے لیے اس میں مشقت نہ پاتا تو انہیں ہر نماز کے ساتھ مسواک کا حکم دیتا۔ مسواک کرکے پڑھی ہوئی دو رکعتیں ایسی ستر رکعتوں سے افضل ہیں ۔ جن میں مسواک نہ کیا گیا ہو۔حضرت ابو ہریرہ روای ہیں کہ حضور پاک ۖ نے ارشاد فرمایا کہ پانچ چیزیں سنت انبیاء میں سے ہیں ۔ مونچھیں کٹوانا، ناخن کٹوانا ، زیر ناف بال منٹونا،بغل بال اکھاڑنا، مسواک کرنا ۔ حضرت عبداللہ بن عمر فرماتے ہیں کہ کھانے کے بعد مسواک کرنا دونوعمر غلاموں سے زیادہ قیمتی ہے اور ایک حدیث میں ارشاد فرمایا کہ حضرت جبرائیل ہمسائے کے بارے میں اتنی تاکید فرماتے رہے ۔ مجھے یہ گمان ہونے لگا کہ بس اب انہیں وارث ہی بنا دینگے ۔ اور مسواک کی اس قدر تاکید فرمائی کہ خطرہ ہونے لگا کہ مسوڑھے بھی باقی رہ سکیں گے ۔یا نہیں اور عورتوں کے بارے میں اتنی تاکید فر ماتے رہے کہ میں خیال کرنے لگا شاہد طلاق دینا حرام ہوجائے گا۔ اور تہجد کا اس قدر ذکر کرتے رہے ۔ کہ مجھے یہ خیال ہونے لگا ۔ کہ میری امت کے اونچے لوگ رات کو سویا نہیں کریں گے ۔ مجاہد کہتے ہیں کہ ایک دفعہ حضرت جبرائیل کچھ عرضہ تک تشریف نہ لائے۔ حضور پاک ۖ نے تاخیر کی وجہ پوچھی تو کہنے لگے ہم کیسے آئیں جب کہ یہاں کہ لوگ ناخن نہیں تراشتے مونچھیں نہیں کتاٹے اعضاء اور بدن کو میل نہیں اتارتے اور مسواک نہیں کرتے پھر یہ بھی کہا کہ ہم تیرے رب کے حکم سے ہی حاضر خدمت ہوتے ہیں ۔ ایک حدیث میں ہے کہ جمعہ کو غسل کرنا مسواک کرنا اور خوشبو لگانا ضروری ہوتے ہیں ۔ حمید بن عبدالرحمن کہتے ہیں کہ جو شخص جمعہ کے دن اپنے ناخن تراشتا ہے اللہ تعالیٰ اس کی بیماری دور کرتے ہیں اور شفاء عطا فرماتے ہیں کہ آنحضرت ۖ ارشاد فرماتے ہیں کہ معراج کی شب جب آپ جنت میں داخل ہوئے توحوروں کی ایک خاص جماعت نے آپ کا استقبال کیا۔ اور کہنے لگیں کہ آپ اپنی امت سے فرمائیے۔ کہ وہ مسواک کیا کریں کہ اس سے ہمارے حسن میں اضافہ ہوتا ہے حضور پاکۖ نے ارشاد فرمایا کہ اپنے منہ ہاتھ صاف ستھرے رکھا کرو۔ کہ یہ قرآن پاک کی ادائیگی کا محل ہے۔
آہ جاتی ہے فلک پر اثر لانے کے لیے
بادلو، ہٹ جاؤ، دیدہ راہ جانے کے لیے

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

جواب دیجئے