کمسن بچی سے مبینہ زیادتی، مشتعل ہجوم نے ملزم کو جلا کر مار ڈالا 84

کمسن بچی سے مبینہ زیادتی، مشتعل ہجوم نے ملزم کو جلا کر مار ڈالا

میکسیکو سٹی : میکسیکو میں 6 سالہ بچی کو مبینہ زیادتی کے بعد قتل کرنے والے ملزم کو ہجوم نے رنگے ہاتھوں پکڑ کر تشدد کا نشانہ بنایا اور اُسے جلا کر مار دیا۔

دی مرر کی رپورٹ کے مطابق ملزم کی شناخت ’الفریڈو روبلیرو‘ کے نام سے ہوئی جسے جنوبی ریاست چیاپاس کے گاؤں میں مشتعل افراد نے میں پکڑ کر سرعام تشدد کا نشانہ بنایا اور اُسے خود سزا دیتے ہوئے پیٹرول چھڑک کر آگ لگادی۔

رپورٹ کے مطابق ملزم پر الزام ہے کہ اُس نے گاؤں کی 6 سالہ جیرید نامی بچی کو مبینہ طور پر زیادتی کا نشانہ بنانے کے بعد قتل کیا اور اپنے جرم کا اعتراف بھی کیا۔

رپورٹ کے مطابق بچی 9 جنوری کو لاپتہ ہوئی اور پھر اُس کی لاش اگلے روز سڑک کنارے سے برآمد ہوئی۔

گاؤں کے نوجوان ملزم کو دیکھ کر مشتعل ہوگئے اور انہوں نے اُسے شدید تشدد کا نشانہ بنایا جس کے بعد ایک نوجوان نے اُس پر پیٹرول چھڑکا اور آگ لگا دی۔

الفریڈو روبلیرو کو وہاں‌ موجود مشتعل نوجوانوں‌ نے آگ میں جلتا چھوڑ دیا اور اُس کی تصاویر بناتے رہے۔ بعد ازاں پولیس کی نفری نے جائے وقوعہ پہنچ کر مشتعل نوجوانوں کو منتشر کیا اور ملزم کو اسپتال منتقل کیا مگر اُس وقت تک بہت دیر ہوچکی تھی۔

ملزم اسپتال پہنچنے سے قبل ہی دم توڑ گیا اور ڈاکٹرز نے اُس کی موت کی تصدیق کردی، پولیس نے ہجوم کے ہاتھوں ہونے والی ہلاکت کا مقدمہ درج کرکے واقعے کی تحقیقات کا آغاز کردیا۔

پولیس حکام کے مطابق واقعے میں ملوث افراد کے خلاف سخت ایکشن کیا جائے گا کیونکہ کسی بھی شخص کو قانون ہاتھ میں لینے کی اجازت نہیں دے سکتے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں