مالیاتی بحران :خیبر پختونخواہ حکومت سرکاری ملازمین کو تنخواہ دینے میں ناکام

مالیاتی بحران :خیبر پختونخواہ حکومت سرکاری ملازمین کو تنخواہ دینے میں ناکام

مالیاتی بحران کی وجہ سے صوبائی حکومت کے ملازمین کو تنخواہوں کی ادائیگی میں تاخیر کا سامنا ہے۔خیبرپختونخوا حکومت صوبے کے مالی بحران کی وجہ سے ہفتہ، یکم اکتوبر کو اپنے ملازمین کو ستمبر کی تنخواہ ادا کرنے میں ناکام رہی ہے۔

ملک کے ایک قومی انگلش اخبار ڈان میں شائع ہونیوالی ایک رپورٹ میں بتایا گیا ہے کہ وزیر خزانہ تیمور سلیم جھگڑا نے اس معاملے کی تصدیق کی لیکن کہا کہ سرکاری ملازمین کو رواں ہفتے تنخواہ مل جائے گی۔
ضلعی اکائونٹس دفاتر نے سرکاری ملازمین کی تنخواہوں کی ادائیگی میں تاخیر کے حوالے سے نیشنل بینک آف پاکستان کو خطوط جاری کیے ہیں ۔


جس میں کچھ نے اس کی ذمہ داری مرکز کی طرف سے صوبے کے واجبات کی عدم ادائیگی کی وجہ سے پیدا ہونے والے مالیاتی بحران پرعائد کی ہے۔کوہاٹ اور باجوڑ کے ضلعی کنٹرولرز کے اکائونٹس کے نیشنل بنک آف پاکستان کی مقامی شاخوں کو خطوط سوشل میڈیا پر وائرل ہوئے ہیں.انہوں نے لکھاہے کہ ”ہمیں اکاؤنٹنٹ جنرل کے پی سے ٹیلی فونک اطلاع ملی ہے کہ ستمبر 2022 کی تنخواہ کی پروسیسنگ، ڈائریکٹر FABS، کنٹرولر جنرل آف اکائونٹس، اسلام آباد کے ذریعہ SAP سسٹم میں کچھ نظاماتی کام یا تبدیلی کی وجہ سے روکی جاسکتی ہے۔اس کے جواب میں بتایا گیا کہ مذکورہ ماہ کی تنخواہ پر کارروائی ہو چکی ہے اور اس سلسلے میں 25 ستمبر کو اس دفتر کی جانب سے چیک بھی جاری کر دیے گئے ہیں۔


خطوط کے ذریعےضلعی اکاؤنٹس کے دفاتر کو ہدایت کی گئی تھی کہ وہ متعلقہ نیشنل بنک آف پاکستان کی برانچوں سے رجوع کریں۔
دوسرے بینکوں میں تنخواہ جمع یا پوسٹ نہ کریں، جہاں سرکاری ملازمین کے سیلری اکائونٹس موجود ہیں۔
وزیر خزانہ تیمور سلیم جھگڑا نے اپنے فیس بک پیج پر لکھا کہ سرکاری ملازمین کو تمام تنخواہیں اگلے ہفتے ‘وقت پر’ ادا کر دی جائیں گی۔
انہوں نے کہا کہ صوبہ اس بات کو یقینی بنا رہا ہے کہ وہ وفاقی حکومت کی جانب سے واجبات کی عدم ادائیگی سے پیدا ہونے والے مالیاتی بحران کو سنبھالے گا۔


مسٹر جھگڑا نے ایک موقر قومی جریدے ” ڈان ” کی فون کال اور واٹس ایپ پیغام کا جواب نہیں دیا۔
رابطہ کرنے پر محکمہ خزانہ کے ایک سینئر افسر نے دعویٰ کیا کہ ستمبر کی تنخواہ سرکاری ملازمین کو پیر کے روز ادا کر دی جائے گی۔دریں اثنا، ذرائع نے ”ڈان” کو بتایا کہ مالی بحران کے باوجود تنخواہ کی ادائیگی پیر یا منگل کو ہونے کا امکان ہے۔
انہوں نے کہا کہ صوبائی حکومت کو ہر ماہ تنخواہ اور پنشن کی ادائیگی کے لیے 42 ارب روپے درکار ہیں۔
لیکن فی الحال اس کی مالی صورتحال انتہائی نازک ہے۔


پچھلے مہینے کے شروع میں، وزیر خزانہ جھگڑا نے کہا تھا کہ صوبے کو اپنے خالص ہائیڈل منافع کے واجبات، فنڈز میں ضم شدہ علاقوں کا حصہ، اور سیلاب سے ہونے والے نقصانات کی ادائیگیوں کی عدم ادائیگی کی وجہ سے 275 بلین روپے کے فنڈز کی کمی کا سامنا ہے۔


صوابی سے ہمارے نامہ نگار نے مزید کہا کہ ضلع میں شکایت کی گئی ہے کہ تمام سرکاری ملازمین اور پنشنرز کو ہفتہ کے روز ان کی ستمبر کی ادائیگیاں موصول نہیں ہوئیں۔ڈسٹرکٹ اکائونٹس آفس کے ایک اہلکار نے نام ظاہر نہ کرنے کی شرط پر بتایا کہ متعلقہ صوبائی حکام نے دفتر کو فی الحال سرکاری ملازمین کو ماہانہ تنخواہ جاری کرنے سے روک دیاہے۔
انہوں نے کہا کہ پورے صوبے میں پبلک سیکٹر کے ملازمین کو پچھلے مہینوں کے برعکس تنخواہ نہیں ملی۔
اہلکار نے کہا کہ ہفتہ اور اتوار کو بنک اور دفاتر بند تھے۔


اس لیے امکان ہے کہ تنخواہ کی ادائیگی کے بارے میں ہدایات صوبائی اکاؤنٹنٹ جنرل کے دفتر سے پیر 3 اکتوبرکو موصول ہوں گی۔
ایک اور اہلکار کا کہنا تھا کہ انہیں تنخواہ اور پنشن کی ادائیگی میں تاخیر کی وجہ کے بارے میں کوئی علم نہیں تھا۔
ہمیں اکاؤنٹنٹ جنرل آف ہائیر کے دفتر سے ملنے والے احکامات پر عمل کرنا ہے، اس لیے ہم نے ایسا کیا۔اہلکار نے کہا کہ اگر ڈسٹرکٹ اکاؤنٹس آفس سے ملازمین کو تنخواہ ادا کرنے کے لیے کہا گیا تو اس نے وہ رقم بینکوں کو ان کے ذاتی اکائونٹس کے ذریعے ملازمین کو تقسیم کرنے کے لیے جاری کردی۔کچھ عہدیداروں نے دعوی کیا کہ تنخواہ پیر کو کر دی جائے گی۔

دریں اثنا، پبلک سیکٹر کے محکموں کے ملازمین کے رہنماؤں نے اس معاملے پر پی ٹی آئی حکومت کو تنقید کا نشانہ بنایا اور کہا کہ صوبے کی تاریخ میں پہلی بار سرکاری ملازمین کو وقت پر تنخواہ نہیں ملی۔ان کا کہنا تھا کہ یہ مسئلہ حکمرانوں کی نااہلی کی وجہ سے ہوا ہے۔


آل گورنمنٹ ایمپلائز گرینڈ الائنس کے صوبائی جنرل سیکرٹری عابد حسین نے ”ڈان” کو بتایا کہ پبلک سیکٹر آرگنائزیشنز کے ملازمین کی ماہانہ تنخواہ ان کی آمدنی کا واحد ذریعہ ہے اور اگر اس کی ادائیگی میں تاخیر ہوتی ہے تو انہیں بڑے پیمانے پر نقصان اٹھانا پڑتا ہے۔
ملگری کے صوبائی صدر استادان امجد علی نے کہا کہ حکومت تنخواہوں کی ادائیگی میں تاخیر کا جواز پیش کرنا ترک کرے اور ملازمین کی مشکلات کم کرنے کے لیے اس کی فوری فراہمی کو یقینی بنائے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں